تعارف ضیمہ جات محضر نامہ

تعار ف ضمیمہ جات محضر نامہ

            محضرنامہ وہ تاریخی دستاویز ہے جو جماعت احمدیہ نے 1974ء میں پاکستان کی قومی اسمبلی کے پورے ایوان پر مشتمل خصوصی کمیٹی کے سامنے اپنے مسلمان ہونے، اپنے بنیادی عقائد کی وضاحت اور جماعت احمدیہ پر لگائے گئے بعض بے بنیاد الزامات کی تردید کے لئے پیش کی اور یہ دستاویز حضرت مرزا ناصر احمد صاحب خلیفة المسیح الثالثؒ نے قومی اسمبلی میں پڑھی۔

            قومی اسمبلی میں یہ موقف پیش کیاگیا کہ مذہب انسان کا بنیادی حق ہے جس حق کو قرآن کریم ، اقوام متحدہ اورآئین پاکستان نے بھی تسلیم کیا ہے۔ اور دنیا کی کوئی عدالت یا اسمبلی کسی سے یہ حق چھین نہیں سکتی۔ ہم خدا کے فضل سے مسلمان ہیں اللہ کی توحید کے قائل ہیں، آنحضرت صلی اللہ علیہ وسلم کو خاتم النبیین مانتے ہیں اور قرآن کریم کو اللہ کی کامل شریعت تسلیم کرتے ہیں۔ مذکورہ بالا موقف کی تائید میں محضر نامہ کے ساتھ مختلف ضمیمہ جات بھی اراکین اسمبلی میں تقسیم کئے گئے تھے جن سے جماعت کے موقف اور عقائد کی وضاحت ہوتی ہے۔

محضر نامہ کے ضمیمہ جات پڑھنے کے لئے یہاں کلک کریں