ٹرمپ اور حامد میر صاحب

بسم اللہ الرحمن الرحیم

ٹرمپ اور حامد میر صاحب

(ڈاکٹر مرزا سلطان احمد)

Download as PDF

مؤرخہ 11دسمبر 2017کو روزنامہ جنگ میں مکرم حامد میر صاحب کا ایک مضمون شائع ہوٴا۔ اس مضمون کے شروع میں انہوں نے بجا طور پر صدر ٹرمپ کے اس غیر منصفانہ فیصلہ پر تنقید کی اور غم و غصہ کا اظہار کیا کہ امریکہ کا اسرائیل میں سفارت خانہ یروشلم منتقل کر دیا جائے۔ اور اُن کی یہ بات بھی درست ہے کہ اس فیصلہ کے خلاف پاکستان سے اُٹھنے والی آواز اس لئے کمزور اور بے اثر معلوم ہو رہی ہے کیو نکہ جبکہ پاکستان میں آپس میں ہی اتفاق نہیں ہے تو عالمی سطح پر ان کی آواز میں کیا اثر ہو سکتا ہے؟ ایک اور اہم نکتہ اُنہوں نے یہ بیان فرمایا کہ 1940میں جب مسلم لیگ نے ایک علیحدہ ملک کے لیے قرارداد منظور کی تو اس کے ساتھ ہی فلسطینیوں کی حمایت کے لیے بھی ایک قرارداد منظور کی۔

ان معلومات میں اس بات کا اضافہ کرنا مناسب ہو گا کہ قیام ِ پاکستان کے معاََ بعد قائد ِ اعظم کی راہنمائی میں پاکستان نے جس مسئلہ پر اقوام ِ متحدہ میں آواز بلند کی وہ قیام اسرائیل کے خلاف اور فلسطینیوں کے حقوق کے لیے ہی بلند کی گئی تھی۔ابھی ملک کے پہلے وزیر ِ خارجہ کا تقرر نہیں ہوٴا تھا۔ قائد ِ اعظم نے اُس وقت اقوام متحدہ میں پاکستان کی نمایندگی کے لیے چوہدری ظفر اللہ خان صاحب کو مقرر فرمایا۔ اور اس وقت اقوام ِ متحدہ میں دو کمیٹیاں کام کر رہی تھیں ۔ ایک کمیٹی اسرائیل کے قیام کے حامی ممالک کی تھی جو اپنے موقف کے مطابق تجاویز تیار کر رہی تھی۔اس کمیٹی کے صدر پولینڈ کےMR. KSAWERY PRUSZYSKIتھے۔ اور امریکہ اور سوویت یونین دونوں اسرائیل کے قیام کی حمایت کر رہے تھے۔ دوسری کمیٹی زیادہ تر عرب ممالک اور مسلمان ممالک پر مشتمل تھی جو کہ فلسطینیوں کے حقوق کی حفاظت کے لیے تجاویز مرتب کر رہی تھی اور قیام ِ اسرائیل کی مخالفت کر رہی تھی۔ یہ بات دلچسپ ہے کہ با وجود اس کے کہ اُس وقت چند ماہ پہلے ہی پاکستان آزاد ہوٴا تھا ، اس کمیٹی کے ممبران نے اس کمیٹی کی صدارت کے لیے پاکستان کے مندوب چوہدری ظفر اللہ خان صاحب کو منتخب کیا تھا۔اور بعد میں بادشاہ بننے والے امیر فیصل بھی اس کے رکن تھے۔یہ بات قابل ِ فخر ہے کہ پاکستان کے نمائندہ چوہدری ظفر اللہ خان صاحب اس وقت اقوام ِ متحدہ کی جنرل اسمبلی میں تقریر کرتے ہوئے اسرائیل بنانے اور فلسطین تقسیم کرنے کے منصوبے کے بارے میں دنیا کو ان الفاظ میں متنبہ کیا تھا کہ اسرائیل بنانے والی طاقتوں کا اصل منصوبہ یہ ہے:

”پہلے ہم فلسطین کے جسم کے ٹکڑے ٹکڑے کر کے تین حصے اسرائیل کو اور تین حصے فلسطین کو دیں گے۔ پھر جافہ پر قبضہ کریں گے اور فلسطین کا دل یروشلم ہمیشہ ایک بین الاقوامی تسلط میں رہنے والا شہر بن جائے گا۔جب ہم فلسطین کے جسم کو اس طرح تقسیم کر لیں گے تو پھر خون سے رستہ ہوایہ جسم ہمیشہ کے لیے صلیب پر لٹکا دیا جائے گا۔ فلسطین کبھی بھی اس کے باشندوں کا نہیں ہو گا بلکہ یہ ہمیشہ کے لیے صلیب پر لٹکا دیا جائے گا۔“(۱)

28نومبر 1947کو کی جانے والی یہ پیشگوئی آج حرف بحرف پوری ہو رہی ہے۔لیکن ہمیں اس بات پر حیرت اور افسوس ہو رہا ہے کہ ملک میں اتحاد کی باتیں کرتے ہوئے بجائے امریکہ کی زیادتی کے خلاف کوئی تجویز پیش کرنے کے اچانک حامد میر صاحب نے یہ ذکر چھیڑ دیا کہ کہ قائد ِ اعظم احمدیوں کو مسلمان نہیں سمجھتے تھے۔انہوں نے کوئی حوالہ نہیں دیا لیکن ہم ایک دو حقائق پیش کرنا چاہتے ہیں۔

(اول)یہ تو سب جانتے ہیں کہ چوہدری ظفر اللہ خان صاحب احمدی تھے۔1939میں اسمبلی میں تقریر کرتے ہوئے قائد ِ اعظم نے فرمایا تھا” میں اپنی اور اپنی پارٹی کی طرف سے آنرایبل سر ظفر اللہ خان کو ہدیہ تبریک پیش کرنا چاہتا ہوں۔ وہ مسلمان ہیں ۔اور یوں کہنا چاہیے کہ میں اپنے بیٹے کی تعریف کر رہا ہوں۔“

(دوئم) یہ تو سب جانتے ہیں تقسیم ِ ہند سے قبل صدر تو ایک طرف رہا مسلم لیگ کا ممبر بھی صرف مسلمان ہی بن سکتا تھا۔ اور 1931میں چوہدری ظفر اللہ خان صاحب کو مسلم لیگ کا صدر منتخب کیا گیا۔(سوئم) جماعت ِ احمدیہ کے شدید مخالف عند الحامد بدایونی صاحب نے اس بات کا اعتراف کیا تھا کہ 1944میں انہوں نے آل انڈیا مسلم لیگ کے اجلاس میں یہ قرارداد پیش کی تھی کہ کسی احمدی کو مسلم لیگ کا رکن نہ بننے دیا جائے لیکن خود قائد ِ اعظم نے انہیں کہا تھا کہ وہ یہ قرارداد واپس لے لیں۔ اگر یہ قرارداد قائد ِ اعظم کے خیالات کے مطابق تھی تو اُن جیسے اصول پسند شخص کو اس کی بھر پور حمایت کرنی چاہیے تھی۔(3)

30نومبر کو اپنے ایک مضمون میں حامد میر صاحب نے یہ دعویٰ کیا تھا کہ جب 1974میں جماعت ِ احمدیہ کا وفد قومی اسمبلی میں موجودتھا تو 20 اگست کو اٹارنی جنرل صاحب نے اسرائیل میں احمدیوں کے بارے میں سوال کیا تھا۔ اس پر امام جماعت ِ احمدیہ نے جواب دیا تھا کہ ” ہمارے اسرائیل سے اچھے تعلقات ہیں“۔ اس کے جواب میں خاکسار نے عرض کی تھی کہ شائع شدہ کارروائی گواہ ہے کہ یہ جملہ امام جماعت ِ احمدیہ نے ہر گز نہیں فرمایا تھا۔ اب اس مضمون میں بجائے اس کا حوالہ دینے کے حامد میر صاحب نے لکھا ہے کہ کارروائی کے صفحہ 1061سے لے کر1070پر اسرائیل میں احمدیوں کے بارے میں سوال کیا گیا تھا۔ ہم ایک بار پھر یہ عرض کرتے ہیں کہ ان صفحات پر یہ جملہ ہر گز موجود نہیں ہے۔ حامد میر صاحب سے ایک بار پھر گذارش ہے کہ یہ راہنمائی فرمائیں کہ یہ جملہ کس صفحہ پر ہے؟ اس کے بر عکس 21اگست کی کاررووائی کے دوارن جب اس بابت سوال ہوا تو امام جماعت ِ احمدیہ نے فرمایا تھا کہ وہاں پر احمدی اُس وقت سے موجود ہیں جب اسرائیل بنا ہی نہیں تھا اور95فیصد مسلمان دوسرے فرقوں سے تعلق رکھتے ہیں احمدیوں کی تعداد بہت کم ہے اور احمدیوں کے تمام مسلمانوں سے وہاں بہت برادرانہ تعلقات ہیں۔ اور فرمایا تھا کہ مغربی افریقہ کے دورہ کے دوارن دو ملکوں میں اسرائیل کے سفیروں نے ملنے کا وقت مانگا تھا تو میں نے کہا تھا کہ میں ان سے نہیں ملنا چاہتا۔اور فرمایا تھا کہ پوچھنا تو یہ چاہیے کہ جو مسلمان اسرائیل میں آباد ہیں ان کے حقوق کے لیے کیا کیا جائے۔(کاررووائی صفحہ1009تا1016)

حامد میر صاحب نے بھٹو صاحب کی ایک تقریر کا حوالہ دیا ہے جو انہوں نے 7ستمبر 1974کو قومی اسمبلی میں کی تھی۔ہم بھی ان کی تقریر کا حوالہ پیش کرتے ہیں جو بھٹو صاحب نے سپریم کورٹ میں کی تھی اور وہ ان کی زندگی کی آخری تقریر تھی۔ 1978میں اس بات پر تبصرہ کرتے ہوئے کہ ہائی کورٹ نے انہیں نام کا مسلمان قرار دیا ہے انہوں نے کہا تھاکہ ایک اسلامی ریاست میں اور ایک کلمہ گو کے لیے یہ بڑی ہی غیر معمولی بات ہے کہ وہ یہ ثابت کرے کہ وہ مسلمان ہے۔اور پھر کہا کہ ایک مسلمان کے لیے یہ کافی ہے وہ کلمہ پڑھتا ہے اور کلمہ پر یقین رکھتا ہے۔(4) مزید کسی تبصرہ کی ضرورت نہیں ہے۔

 

 

(1)https://unispal.un.org/DPA/DPR/unispal.nsf/0/93DCDF1CBC3F2C6685256CF3005723F2

(2) ہماری قومی جدو جہد مصنفہ عاشق حسین بٹالوی ، ناشر سنگ ِ میل ص218

(3)نوائے وقت لاہور 10اکتوبر 1944

(4)عدالت ِ عظمیٰ سے چیئرمیں بھٹو کا تاریخی خطاب،ناشر جمہوری پبلیکیشنز جون 2011،ص27تا31